102

رمضان شیئرنگ فریج: دبئی میں ضرورت مندوں کو سحر و افطار کرانے کا انوکھا انداز

دبئی: رمضان المبارک کے با برکت مہینے میں ہر مسلمان نیکیاں کمانے کی جستجو میں نظر آتا ہے اور غرباء اور ضروت مندوں کی ہر ممکن مدد کرنے کی کوشش کرتا ہے، ایسا ہی ایک انوکھا انداز دبئی میں بھی دیکھا گیا جہاں لوگوں نے کھانے کی اشیاء سے بھرے فریج گھروں سے باہر نکال کر رکھ دئیے۔

گلف نیوز کی رپورٹ کے مطابق رمضان المبارک کے بابرکت ماہ میں دنیا کے کئی اسلامی ممالک کی طرح دبئی میں بھی انسان خدمت کے جذبے سے سرشار مسلمان روزہ داروں کے لیے سحر و افطار کا بندوبست کرتے ہیں۔

ایسے میں پورے دبئی میں 100 سے زائد ‘رمضان شیئرنگ فریج’ رکھے جاچکے ہیں اور ان میں ہر روز اضافہ ہو رہا ہے۔

گھروں سے باہر کھانے سے بھرے فریج دیکھ کر مزدور اور غرباء آتے ہیں اور اپنی مرضی سے فریج میں رکھے پسندیدہ کھانوں سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

دبئی میں گولے داغ کر وقتِ افطار کے اعلان کی روایت برقرار

ضرورت مند اور غریب افراد کو سحری و افطاری کروانے کا یہ منفرد انداز نہ صرف ثواب کا ذریعہ ہے بلکہ ایسے افراد جو گھروں سے دور ہیں اور افطاری کا اہتمام نہیں کر پاتے، ان کے لیے بھی نہایت موثر ثابت ہوا۔

دبئی کی رہائشی ایک خاتون کے مطابق انہوں نے شہر کے مختلف مقامات پر کھانے پینے کی چیزوں سے بھرے فریج رکھوائے ہیں جن میں کھانے کا سامان رکھنے کے لیے ملازم بھی موجود ہیں۔

اس اقدام کا آغاز 2016 میں دبئی میں رہائش پذیر ایک 31 سالہ آسٹریلوی خاتون سمیہ سید نے کیا تھا، جو ایمرٹس ریڈ کریسنٹ اور اسلامک افیئرز اینڈ چیریٹیبل ایکٹیویٹیز ڈپارٹمنٹ (آئی اے سی اے ڈی) سے لائسنس یافتہ ہے۔

سمیہ نے ‘رمضان شیئرنگ فریجز’ کے نام سے ایک فیس بک پیج بھی بنایا، جس کے اب 28 ہزار سے زائد فالوورز ہیں اور ان میں دن بدن اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں