334

چار وزیر اعظم کھا کر۔۔ اربوں کما کر۔۔۔ میاں جی حج کو چلے

چار وزیر اعظم کھا کر۔۔ اربوں کما کر۔۔۔ میاں جی حج کو چلے
1988 میں جونیجو1990اور 1996میں بے نظیر اور 2012میں یوسف رضا گیلانی کو گھر بجھوانے میں کس کا ہاتھ تھا
جس دور میں بے نظیر کے سر ے محل اور نیکلس کا شور تھا اسی دور میں بیرون ملک جائیدادیں کس نے بنائیں ؟
1985میں وزیر خزانہ 1988میں وزیر اعلی،1990، 1996کے بعد 2013میں کس کی مدد سے وزیر اعظم بنے
آجکل میاں نواز شریف روز بروز نت نئے بیان اور بیانیئے دے رہے ہیں کبھی وہ پانچ ججوں کی بات کر کے عدلیہ پر حملہ آور ہوتے ہیں تو کبھی ووٹ کو عزت دے کر اسٹیبلشمنٹ کو للکار رہے ہوتے ہیں ،ایک دن وہ چیئرمین نیب کو لتاڑ رہے ہوتے ہیں تو دوسرے روز ڈان لیکس کی تصدیق کر کے فوج کو مورد الزام دے رہے ہوتے ہیںکہ وہ ملک میں جمہوریت کو پنپنے نہیں دے رہی، پھر اچانک وہ ذوالفقار علی بھٹو کے عدالتی قتل کی بات کرتے ہیں اور ساتھ ہی بے نظیر بھٹو کی شہادت کی بات کرتے ہیں ، پہلے وہ مجھے کیو ں نکالا کی بات کرتے ہیں اور ساتھ ہی وہ سابق وزرائے اعظم کو نکالے جانے کی بات کرتے ہیں۔کبھی وہ جے آئی ٹی میں اپنے بیٹے کی تصویر پر خفا ہوتے ہیں تو کبھی وہ اپنی بیٹی کو عدالت میںبیان ریکارڈ کرواتے جذباتی ہو جاتے ہیں ، ایک طرف مشرف کے لاڈلے مشاہد حسین کو دوسری طرف سابق آمر کے وزیر قانون زاہد حامد کو بٹھا کرجس کے ساتھ دس سال کا معاہدہ کر کے سعودی عرب گئے اور جسے خودباہر جانے کی اجازت دی اسی مشرف کو کوس رہے ہوتے ہیں
لیکن اگر سوچا جائے تو اپنے بچے تو آئیرکنڈیشن کمروں میں بیان دیں تو بہت برا لگتا ہے اپنی بیٹی بیان ریکارڈ کروائے تو بہت ناگوار گزرتا ہے لیکن ماڈل ٹاون میں کسی کی حاملہ بیٹی کے منہ میں گولیاں مار دی جائیں سو بندوں کو سیدھی گولیاں مار دی جائیں ان بچوں کی کیوں بات نہیں کرتے ۔ بھٹو کی پھانسی کی بات کرتے ہیں لیکن اس کی بیٹی کو ایک ایک دن میں تین تین عدالتو ں میں پیشیاں بھگتنے اور اڈیالہ جیل میں شیر خوار بچوں کے ساتھ ملاقاتوں کی بات بھی کر لیا کریں۔ قوم کو فوج کے بارے میں اور خفیہ ایجنسی کے پیغام کی بات کرتے ہیں اس قوم کو یہ سچ بھی تو بتائیں کہ ضیاالحق نے 29مئی1988کو آپ کے ہی وزیر اعظم محمد خان جونیجو کی حکومت کو برطرف کیا تو عبوری وزیر اعلی کا حلف کس نے اٹھایا وہ وزیر اعظم کس کے مشورے کے ساتھ رخصت ہوئے اور کس کے سامنے سر جھکانے پر آپ کو پنجاب کی پگ دی گئی ۔
قوم کو یہ سچ کیوں نہیں بتایا گیا کہ 1990میں کس کے سامنے سر جھکا اور آئی جے آئی کے نام پر کیوں فوج سے پیسے لئے گئے ، قوم کو یہ بھی سچ پتہ چلنا چاہئے کہ اگست 1990میں غلام اسحق خان اور پانچ نومبر 1996میں سردار فاروق لغاری جس کے بیٹے آپ کی اب کیبنٹ میں ہیں نے کس کی تحریک اوراشیر باد سے بے نظیر کی حکومت کو چلتا کیا، کس نے بے نظیر حکومت کو سیکورٹی رسک قرار دیا ، پھر جب آپ جلا وطنی کاٹ کر پاکستان آئے تو سپیکر رولنگ کے خلاف سپریم کورٹ میں پانچ جو ن2012میں کس جماعت نے رٹ کی تھی اور پھر صرف چودہ دن بعد 19جون 2012کو کس کی رٹ پر یوسف رضا گیلانی کو گھر بجھوایا گیا ، میاں صاحب اس ملک کے چار وزیر اعظم کو گھر بجھوانے میں تو آپ کے ہاتھ رنگے ہوئے ہیں پہلے اس پر تو قوم سے معافی مانگیں ۔ اتنا سچ تو بولیں
پھرقوم کو یہ بتائیں کے الیکشن مہم میں بے نظیر کے خلاف ہیلی کاپڑ سے کس پارٹی نے نازیبہ پمفلٹ گرائے تھے، پھر جب الیکشن مہم میں سرے محل کو شور مچ رہا تھا تو اسی وقت 1990کی دہائی میں لندن فلیٹس سمیت بیرون ملک جائیدادیں کس نے بنائی تھیں اور وہ پیسہ کہاں سے آیا تھا
میاں صاحب قوم کو یہ بھی سچ بتائیں کہ 1947میں جب آپ کا خاندان پاکستان آیا اس وقت سے لے کر 1985تک38سالوں میںجب آپ کا قدم مبارک سیاست میں آیا تواس وقت تک تو آپ کے خاندان کے پاس ایک اتفاق سٹیل مل تھی پھر1985سے1999تک میں لندن فلیٹ سے رائے ونڈ محل کی جائیددیںمحض14 سالو ں میں یہ جاگیر کس طرح بن گئی ۔
قوم کو سچ بناتے ہی لگے ہیں تو قوم کو یہ بھی بتائیں 13مئی 2013 کی رات جب پولنگ ختم ہو چکی تھی تو وکٹری تقریر میں آپ کسے کہہ رہے تھے کہ میں بیساکھیوں کی مدد سے حکومت بنانا چاہتا ہوں ۔ قوم کو یہ بھی بتائیں کہ 31اگست2014 کی رات جب آپ اور آپکے وزیر بھاگ گئے تھے توآپ کی حکومت کس کے کہنے سے بچی تھی اور پھر لندن میں آپ دو ماہ تک کس چیز کا علاج کرواتے رہے اور یہ بھی کہ پرویز رشید، مشاہد اللہ ، طارق فاطمی ، راو تحسین کو کس کے کہنے پر عہدوں سے ہٹایا تھا ۔ میاں صاحب کہا آپ نے سچ ہے وہ بھی آدھا لیکن کہا (ویلے دیاں نمازاں کویلے دیاں ٹکراں )کے مصداق ہے کبھی پورا سچ بھی بول دینا کیوں کہ یہ والا آدھا سچ تو لوگ بھول چکے شاید پورا سچ یاد رہے
کالم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں