87

پاکستان 134 رنز پر ڈھیر، انگلینڈ اننگز اور 55 رنز سے فاتح

باؤلرز کی شاندار کارکردگی کی بدولت انگلینڈ نے پاکستان کو سیریز کے دوسرے اور آخری ٹیسٹ میچ میں اننگز اور 55رنز سےشکست دے کر سیریز 1-1 سے برابر کردی۔

لیڈز میں کھیلے جا گئے سیریز کے دوسرے ٹیسٹ میچ کے تیسرے دن انگلینڈ نے 302 رنز 7 کھلاڑی آؤٹ سے اپنی پہلی نامکمل اننگز دوبارہ شروع کی تو جوز بٹلر پاکستانی باؤلرز کی راہ میں حائل تھے۔

وکٹ کیپر بلے باز نے شاندار بیٹنگ کا مظاہرہ کیا جس کا اندازہ اس بات سے لگا جا سکتا ہے کہ تیسرے دن کی صبح انگلینڈ نے اپنے گزشتہ اسکور میں مزید 61 رنز کا اضافہ کیا جس میں سے 46رنز بٹلر نے بنائے۔

انگلینڈ کی ٹیم پہلی اننگز میں 363 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی جبکہ جوز بٹلر نے ناقابل شکست 80 رنز کی اننگز کھیل کر اپنی ٹیم کو پہلی اننگز میں 189 رنز کی فیصلہ کن برتری دلائی۔

پاکستان کی جانب سے فہیم اشرف 3 وکٹیں لے کر سب سے کامیاب باؤلر رہے جبکہ حسن علی، محمد عامر اور محمد عباس نے دو، دو وکٹیں حاصل کیں۔

189 رنز کے خسارے کے بعد پاکستانی اننگز کا آغاز ایک مرتبہ پھر مایوس کن انداز میں ہوا اور اظہر علی 11 اور حارث سہیل 8 رنز بنا کر جیمز اینڈرسن کی وکٹ بن گئے۔

پاکستان کو بڑا دھچکا اس وقت لگا جب تجربہ کار اسد شفیق لیگ اسٹمپ سے باہر جاتی گیند پر غیرضروری شاٹ کھیلنے کی کوشش میں وکٹ کیپر کو کیچ دے کر پویلین لوٹ گئے۔

اس موقع پر امام الحق کا ساتھ دینے عثمان صلاح الدین آئے اور دونوں کھلاڑیوں نے سنبھل بیٹنگ کرتے ہوئے تھوڑی دیر کے لیے وکٹیں گرنے کے سلسلے کو روک دیا۔

دونوں نوجوان کھلاڑیوں نے چوتھی وکٹ کے لیے 42رنز کی شراکت قائم کی لیکن اس مرحلے پر امام کی ہمت جواب دے گئی اور وہ 34رنز بنا کر پویلین لوٹ گئے۔

امام کے آؤٹ ہونے کے بعد انگلینڈ کو پاکستان کی بساط لپیٹنے میں زیادہ مشکلات پیش نہیں آئیں اور پوری ٹیم صرف 134 رنز پر ڈھیر ہو کر میچ میں اننگز اور 55رنز کی بدترین شکست سے دوچار ہوئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں