37

ہالینڈ،یوٹریکٹ میں ٹرام میں فائرنگ سے تین افراد ہلاک

دی ہیگ :ہالینڈ کے شہر یوٹریکٹ میں ٹرام میں فائرنگ کے واقعے میں تین افراد ہلاک اور نو زخمی ہو گئے ہیں۔ ڈچ پولیس ایک 37 سالہ ترک شہری گوکمن تانس کو تلاش کر رہی ہے۔ پولیس نے لوگوں سے کہا ہے کہ وہ اس شخص کے قریب نہ جائیں۔ ہالینڈ کی انسداد دہشتگردی پولیس نے کہا ہے کہ بظاہر یہ دہشگردی کا واقعہ ہے۔اس سے پہلے پولیس نے کہا تھا کہ حملہ آور ایک سے زیادہ بھی ہو سکتے ہیں جنھیں پولیس ڈھونڈنے کی کوشش کررہی ہے۔ٹرام میں فائرنگ کرنے والا شخص واردات کے بعد کار میں بیٹھ کر جائے وقوعہ سے سے فرار ہو چکا ہے۔ یو ٹریکٹ میں تمام ٹرامزسروسز کو بند معطل کر دیا گیا ہے اور سکولوں سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنے دروازے بند رکھیں۔ ٹرام میں فائرنگ کا یہ واقع مقامی وقت کے مطابق پونے گیارہ بجے (جی ایم ٹی 10:40) رونما ہوا۔

ڈچ انسداد دہشتگردی پولیس کے رابطہ کارپیٹر یاپ البرسبرگ نے کہا ہے کہ تمام کوششیں حملہ آور کو پکڑے پر مرکوز ہیں۔ انھوں نے کہا کہ یہ ممکن ہے کہ حملہ آور ایک سے زیادہ ہوں۔ ہالینڈ میں خطرے کا درجہ سب سے انتہائی بلند سطح تک بڑھا دیا گیا ہے اور ایئرپورٹ اور مساجد کے حفاظت کیلیے پیرا ملٹری پولیس تعینات کر دی گئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق مسلح پولیس جائے وقوع کے قریبی علاقے اوکتوبرپلین چوک کے قریب کے ایک گھر کے قریب جمع ہے اور اس گھر میں گھسنے کی تیاری کر رہی ہے۔ پولیس نے ٹرام سٹیشن کے نزدیکی علاقے کو گھیرے میں لے کر لوگوں سے اپیل کی ہے وہ اس علاقے کی طرف نہ جائیں تاکہ ایمرجسنی سروسز اپنا کام کر سکیں۔ مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق ڈچ انسداد دہشگردی کے رابطہ کار نے ایمرجنسی اجلاس طلب کر لیا ہے۔

وزیر اعظم مارخ رتے نے کہا ہے کہ وہ اس واقعے سے شدید پریشان ہیں۔سکیورٹی سروسز نے یوٹریکٹ یونیورسٹی میڈیکل سینٹر سے کہا ہے کہ وہ زخمیوں کے علاج کے لیے ایک ایمرجنسی وارڈ مختص کریں۔ایک عینی شاہد نے کہا ہے کہ حملہ آور اندھا دھند فائرنگ کر رہا تھا۔ایک اور عینی شاہد نے ڈچ سرکاری نشریاتی ادارے این او ایس کو بتایا ہے کہ اس نے ایک زخمی عورت کو دیکھا ہے جس کے ہاتھ اور کپڑے خون آلود تھے اور اس نے عورت کو اپنی کار لا کر مدد کی۔ عینی شاہد نے بتایا کہ جب پولیس موقع پر پہنچی تو زخمی عورت بے ہوش تھی۔ ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ اس واقعے میں کتنے لوگ زخمی ہوئے ہیں اور ان میں سے کتنے شدید زخمی ہیں۔اوٹریجٹ میں تمام ٹریمزسروسز کو بند معطل کر دیا گیا ہے اور سکولوں سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنے دروازے بند رکھیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں