6

عملی اقدامات ،سخت قوانین ،چین قومی قدرتی وسائل، نیشنل پارکس تحفظ کیلئے پرعزم

عملی اقدامات ،سخت قوانین ،چین قومی قدرتی وسائل، نیشنل پارکس تحفظ کیلئے پرعزم
اسلام آباد(خصوصی رپورٹ) چین میں رواں ماہ سے جاری نیشنل ایڈوائزری باڈی کے اجلاس میں حکومتی رپورٹ برائے فوریسٹری اور قو می وسائل کے حوالے سے نیشنل فوریسٹری اینڈ گراس لینڈ ایڈمنسٹریشن کے چیرمین ژانگ جیانلاگ نے نیشنل پیپلز کانگریس اور چاینیز پیپلز مشاورتی پولیٹیکل کانفرنس میں کہا کہ چین ملک میں قومی وسائل کے تحفظ اور نیشنل پارکس سسٹم کے تحفظ کے حوالے سے گزشتہ تین سال سے متعلقہ اداروں کے تعاون سے مروجہ عالمی معیارات کو یقینی بنانے کے حوالے سے کوشاں ہے۔

انہوں نے کہا نیشنل پارک سسٹم کو گزشتہ تین سال سے قومی وسائل کے تحفظ کے حوالے سے ایک ماڈل پراجیکٹ کے حوالے سے جاری رکھا گیا ہے۔ اس حوالے سے ان عوامل کو مقصدِ نظر رکھ کر چین گزشتہ تین سال سے نیشنل پارکس کے تحفظ اور بحالی کے امور کو لیکر متحرک انداز میں کام کو سر انجام دے رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چین موجودہ صورتحال کے تحت ملک کے 12صوبوں اور خود مختار علاقوں شمول سینگجوان نیشنل پارک، شمال مشرقی چائینہ ٹائیگر اینڈلیپرڈ نیشنل پارک، قیلیان مائونٹین نیشنل پارک، ہینان ٹراپیکل رین فوریسٹ اور ژانگ نیشنل پارک میں کامیابی سے 10پائلٹ نیشنل وسائل سے متعلق پراجیکٹس کو جاری رکھے ہوئے ہے جن کا مجموعی رقبہ 200,000مربع کلومیٹر بنتا ہے۔ دوسری جانب ملک میں قدرتی وسائل کے تحفظ کو یقینی بناتے ہوئے بہت سے غیر قانونی پراجیکٹس کو موثر نگرانی کے تحت ختم کیا جا چکا ہے۔

حالیہ چند برسوں میں صرف قیلیان مائونٹین نیشنل پارک سے موثر نگرانی کے عمل کے سبب 100سے زائد غیر قانونی معدنیات سے متعلق پراجیکٹس ختم کیئے جا چکے ہیں ۔ اس حوالے سے ژینگ جیانلوگ نے مزید کہا کہ نیشنل پارکس کے متحرک تحفظ سے جہاں ماحولیاتی تحفظ کے حوالے سے اقدامات اور ماحول میں مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں بلکہ ان نیشنل پارکس کی بدولت مقامی آبادیوں کے معیارِ زندگی میں بھی مثبت تبدیلیاں آئی ہیں ، حالیہ برسوں میں چین میں قائم 10نیشنل پارکس کے لیے مقامی سطع پر 50,000رینجرز مقامی سطع پر بھرتی کیئے گئے ہیں جنہیں نگرانی سے متعلق بیشتر پراجیکٹس سونپے گئے ہیں اس طرح سے ان علاقوں میں روزگار کے بہتر مواقع پیدا ہوئے ہیں جس کی بدولت اس علاقے میں مقامی آبادیوں کا معیارِ زندگی کافی حد تک بہتر ہوا ہے۔ اس حوالے سے سے سینگجوان نیشنل پارک ایک بہترین مثال ہے، جہاں پر مقامی سطع پر 1800رینجرز نگرانی کے حوالے سے بھرتی کیئے گئے ہیں ، ان بھرتی کیئے گئے رینجرز کو ماہانہ1800یوآن دیئے جاتے ہیں جس سے اس علاقے او ر انکے خاندانوں کے معیارِ زندگی مین کافی حد تک بہتری ریکارڈ کی گئی ہے۔ اور ان اقدامات کے باعث اس علاقے کے سینکڑوں اور ہزاروں خاندانوں کو کامیابی سے غربت کی انتہائی سطع سے کامیابی سے باہر نکالا جا چکا ہے۔

واضح رہے کہ سینجگوان تبت ریجن میں شمال مشرقی چین میں واقع ہے اور اس پارک کو دنیا کے سب سے بڑے قدرتی نیشنل پارک کا درجہ بھی حاصل ہے جو 123,100مربع کلومیٹر کے علاقے میں پھیلا ہوا ہے اسی علاقے سے درائی یانگٹیز بھی نکلتا ہے اسکے علاوہ درایئے Yellowاورلینک قیگ دریا کے ماخذ بھی سینجیانگ یوآن کا علاقہ ہی ہے۔ اسی طرح شمال مشرقی تائیگر لیپرڈ نیشنل پارک جو جیلین صوبے اورہیلانگجیانگ کے سنگم پر واقع ہے اس علاقے میں سایئبیرین ٹائیگرز اورامور لیپرڈ ز کی بہتات ہے اس ضمن میں جنگلی حیات کی بقا اور تحفظ کے حوالے سے بھی یہ علاقہ بہت اہمیت کا حامل ہے، پوٹاسٹو نیشنل پارک جنوب مشرقی یونہان صوبے میں ہے جو اہم قدرتی مرطوب آبی وسائل کے حوالے سے مشہور ہے۔
پرعزم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں