65

شرمیلا فاروقی سندھ اسمبلی کی رکن بن گئیں

کراچی (میٹرو واچ) خواتین کی مخصوص نشست پر پیپلز پارٹی رہنما شرمیلا فاروقی کو کامیاب قرار دے دیا گیا . الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے شرمیلا فارقی کا بطور رکن سندھ اسمبلی سے نوٹیفیکشن جاری کر دیا گیا ہے .

یہ نشست پاکستان پیپلز پارٹی کی سابق ایم پی اے شہناز بیگم کے قتل کے باعث خالی ہوئی تھی جس پر شرمیلا فاروقی کو کامیاب قرار دے دیا گیا ہے. شرمیلا فاروقی پاکستان پیپلز پارٹی کی متحرک رہنما ہیں.2018 کے عام انتخابات میں پارٹی کی جانب سے ٹکٹ نہ ملنے سے متعلق سوال پر انہوں نے کہا تھا کہ ٹکٹ نہ ملنے پر وہ پارٹی قیادت سے خائف تھیں اور ا بھی بھی خائف ہوں لیکن اس کی وجہ آصف علی زرداری نہیں بلکہ پارٹی کے کچھ اور لوگ تھے.

انہوں نے کہا کہ ان کی فریال تالپور سے اتنی قربت نہیں ہے جتنی آصف علی زرداری سے ہے. خیال رہے کہ رکن سندھ اسمبلی شہناز انصاری کو 15 فروری کو قتل کر دیا گیا تھا. شہناز انصاری کا اپنے بہنوئی کے خاندان سے جھگڑا تھا، شہناز انصاری کے قتل سے ایک روز قبل ہی تصفیہ ہوا تھا، لیکن خواتین کے درمیان تکرار سے معاملہ دوبارہ بڑھ گیا. تفتیشی ذرائع کے مطابق پہلے شہناز انصاری کے حامیوں کی جانب سے فائرنگ کی گئی، مخالفین کی جوابی فائرنگ سے شہناز انصاری قتل ہوگئیں. شہناز انصاری کے شوہر حمید انصاری نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی کی حکومت ہونے کے باوجود میری بیوی کوقتل کردیا گیا، چار روزقبل ایس ایس پی کو سکیورٹی کیلئے درخواست دی تھی،

سکیورٹی دی جاتی تو قتل کی واردات نہ ہوتی،میری بیوی کو بیدردی سے قتل کیا گیا، قاتلوں کو فوری گرفتار کیا جائے. انہوں نے اپنی بیوی رکن سندھ اسمبلی مقتولہ شہناز انصاری کے قتل پر اپنے ردعمل میں کہا کہ چار روز قبل ایس ایس پی سکیورٹی کو تحفظ دینے اور سکیورٹی دینے کیلئے درخواست دی تھی لیکن عمل نہیں کیا گیا، بتایا گیا ہے کہ رکن سندھ اسمبلی مقتولہ شہناز انصاری نے تحریری خط وزیراعلیٰ سندھ، اسپیکر سندھ اسمبلی ، اور سیشن جج نوشہروفیروز کوبھی ارسال کیا گیا تھا.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply