6

پاکستان کو سفارتی طور پر تنہا کرنے کا بھارتی خواب پورا نہیں ہوگا، وزیر خارجہ

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھارت کے زیر تسلط کشمیر میں ہونے والے حملے میں 44 بھارتی فوجیوں کی ہلاکت پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ’تشدد ہماری حکومت کی پالیسی نہیں‘۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے ٹوئٹ کی گئی ایک ویڈیو میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ’تشدد نہ ہی (حکمت عملی) ہے اور نہ ہی ہماری حکومتی پالیسی‘۔

جرمنی کے شہر میونخ میں سیکیورٹی کانفرنس میں شرکت کے لیے گئے وزیر خارجہ نے ویڈیو میں نجی ٹی وی چینل جیو نیوز سے گفتگو کی اور کہا کہ جو واقعہ ہوا ہے میں اس کی مذمت کرتا ہوں لیکن بھارت نے بغیر کسی ثبوت کے فوری طور پر پاکستان پر الزام لگا دیا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان پر الزام لگانا ایک منٹ کی بات ہے، آپ اپنا ملبہ بھی ہم پر پھینک دیجیے لیکن دنیا اس سے قائل نہیں ہوگی، دنیا نے اس کی مذمت کی ہے اور کرنی بھی چاہیے تھی کیونکہ جانوں کا ضیاع ہوا ہے۔

تاہم شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت سے آوازیں آرہی ہیں، جیسا کے جموں اور کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ فاروق عبداللہ نے کہا کہ پاکستان پر الزام لگانا ’آسان راستہ‘ ہے لیکن بھارتی انتظامیہ یہ بھی تو دیکھے کے مقبوضہ کشمیر میں کیا ہورہا ہے۔

وزیر خارجہ نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ وہاں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں ہورہی ہیں اور روز جنازے اٹھ رہے تو کیا اس کا ردعمل نہیں آسکتا؟

انہوں نے کہا کہ میں روس کے وزیر خارجہ سمیت کئی وزرائے خارجہ سے ملا اور کہا کہ مجھے خدشہ ہے کہ بھارت میں انتخابات سے پہلے سیاسی مقصد کے لیے کوئی ’واقعہ‘ ہوسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج سے 2 ماہ قبل پاکستانی حکام نے ‘پی 5’ (امریکا، چین، روس، برطانیہ اور فرانس) کے سفرا کو اسلام آباد میں بلا کر بریف نہیں کیا تھا کہ ہمیں ڈر ہے کہ توجہ ہٹانے کے لیے کچھ نہ کچھ ہوسکتا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کے پاس 2 آپشن ہیں، ایک یہ کہ وہ اہم سیاستدان کی طرح اگلے انتخابات پر نظر رکھتے ہوئے اپنی پالیسی اور رویے کو مرتب کریں اور دوسرا آپشن یہ ہے کہ وہ اپنے خطے، ملک کی غربت اور بہتری کے بارے میں سوچے اور اس کا مطلب علاقائی امن و استحکام ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم بگاڑ نہیں چاہتے بلکہ امن چاہتے ہیں، یہ کہنا کہ ہم پاکستان کو مرعوب کرلیں گے تو یہ درست نہیں، ہم ایک قوم ہیں اور ہم اپنا دفاع اور موقف پیش کرسکتے ہیں، ہمارا پیغام امن ہے۔

دوسری جانب میونخ سیکیورٹی کانفرنس کے دوران امریکی خبر رساں ادارے وائس آف امریکا کی اردو سروس سے بات کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا تھا کہ پلوامہ میں ہونے والے حملے میں جو جانی نقصان ہوا اس پر افسوس ہے لیکن یہ ہمارا ایجنڈا نہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں