38

جی 20ممالک کا صحت کے تمام ضروری اقدامات کرنے کا عہد

اسلام آباد  :جی 20ممالک نے اپنے جاری کردی اعلامیہ میں کہا ہے کہ  جی 20ممالک صحت کے تمام ضروری اقدامات کرنے کا عہد کرتے ہیں اور وبائی مرض پر قابو پانے اور لوگوں خصوصا سب سے زیادہ کمزور لوگوں کی حفاظت کے لئے مناسب مالی اعانت کو یقینی بنانا چاہتے ہیں۔ ہم بروقت اور شفاف معلومات کا تبادلہ کریں   گے۔ تحقیق اور ترقی کے لئے ضروری مواد  ایک دوسرے کیساتھ ضرور شییر کریں۔ اور عالمی سطح پر صحت کے نظام کو مستحکم کرنا، بشمول ڈبلیو ایچ او انٹرنیشنل ہیلتھ ریگولیشنز (IHR 2005) کے مکمل نفاذ کی حمایت کرتے ہوئے۔ ہم طبی سامان کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے مینوفیکچرنگ کی صلاحیت کو بڑھا دیں گے اور یہ یقینی بنائیں گے کہ انھیں مناسب قیمت پر جہاں ان کی انتہائی ضرورت ہے اور جتنی جلدی ممکن ہو، وسیع پیمانے پر دستیاب ہوں۔ ۔ ہم اپنے وزراء صحت کو قومی بہترین طریقوں کو بانٹنے اور اپریل میں ہونے والے وزارتی اجلاس کے ذریعے وبائی امراض کا مشترکہ طور پر مقابلہ کرنے کے لئے جی 20 فوری اقدامات کا ایک سیٹ تیار کرنے کے لئے ضرورت کے مطابق ملاقات کرنے کے لئے ٹاسک دیتے ہیں۔ہم وبائی مرض کے خلاف بین الاقوامی جنگ کو مربوط کرنے کے لئے ڈبلیو ایچ او کے مینڈیٹ کو مزید تقویت دینے کے لئے پوری حمایت اور عہد کرتے ہیں، جس میں فرنٹ لائن ہیلتھ ورکرز کا تحفظ، طبی سامان کی فراہمی، خاص طور پر تشخیصی آلات، علاج، دوائیں اور ویکسین شامل ہیں۔ ہم COVID-19 بحران سے نمٹنے کے لئے عالمی کوششوں کو تیز کرنے کے لئے فوری طور پر قلیل مدتی اقدامات کی ضرورت کو تسلیم کرتے ہیں۔ ہم ڈبلیو ایچ او اسٹریٹجک تیاری اور رسپانس پلان میں مالی اعانت کو ختم کرنے کے  لیے  فورا. مل کر اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔ ہم مزید رضاکارانہ بنیاد پر WHO کے CoVID-19 یکجہتی رسپانس فنڈ، اتحاد برائے  تحقیق(CEPI) اور گیوی، ویکسین اتحاد کو فوری وسائل فراہم کرنے کا عہد کرتے ہیں۔ ہم تمام ممالک، بین الاقوامی تنظیموں، نجی شعبے، مخیر حضرات اور افراد سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ان کوششوں میں اپنا حصہ ڈالیں۔ معاشی صورت حال کے متعلق علامیہ میں کہا گیا ہے کہ عالمی  معاشی نمو کی بحالی، منڈی میں استحکام برقرار رکھنے اور لچک کو مستحکم بنانے کے لئے تمام دستیاب ٹولیس ٹولز کا استعمال کرنا ہوگا۔ہم فی الحال اپنی معیشتوں کی مدد کے لئے فوری اور بھرپور اقدامات کر رہے ہیں۔ کارکنوں، کاروباری اداروں  خاص طور پر چھوٹے، چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں — اور سب سے زیادہ متاثرہ شعبوں کی حفاظت اور مناسب معاشرتی تحفظ  کو یقینی بنانا ہوگا۔ ھدف شدہ مالیاتی پالیسی، معاشی اقدامات، اور وبائی امراض کے معاشرتی، معاشی اور مالی اثرات سے نمٹنے کے لئے گارنٹی اسکیموں کے ایک حصے کے طور پر، ہم عالمی معیشت میں 5 ٹریلین ڈالر سے زیادہ کا نقصان ہورہا ہے ۔ہم جرات مندانہ اور بڑے پیمانے پر مالی اعانت جاری رکھیں گے۔۔ اس ردعمل کی وسعت اور وسعت عالمی معیشت کو اپنے پاؤں پر واپس لے آئے گی اور ملازمتوں کے تحفظ اور ترقی کی بازیابی کے لئے ایک مضبوط بنیاد قائم کرے گی۔ ہم اپنے وزرائے خزانہ اور سنٹرل بینک کے گورنرز سے کہتے ہیں کہ وہ COVID-19 کے جواب میں جی 20 ایکشن پلان تیار کرنے کے لئے مستقل بنیادوں پر ہم آہنگی پیدا کریں اور مناسب بین الاقوامی مالی امداد کی فراہمی کے لئے بین الاقوامی تنظیموں کے ساتھ مل کر کام کریں۔۔
کا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply